ہم تیرے شہر میں آ ئیں

زمانے سے لگا ئی اُمیدیں چھوڑ دی ہم نے تنہا آ ئے تھے تنہا جا ئیں گے پھر اُ میدیں کیسی. تخلیقی ادب میں عموماً اور غزلیہ شاعری میں خصوصاً یہ ضروری نہیں ہے کہ شاعر غزل میں جس امر کا اظہار کرے وہ اس کی اپنی فکر کا نتیجہ ہوں، یا وہ اس کے ذاتی تجربات اور احساسات کا اظہار ہوں۔ آرام گاہ آخری قسط کچھ محبتیں اتنی پاکیزہ ہوتی ہیں کہ ہم انہیں لوگوں سے تو کیا خود سے بھی اس طرح چھپانا چاہتے ہیں کہ کوئی میلا خیال اسے گدلا نہ کردے اس کی پاکیزگی برقرار ہے اس کی حرمت پر کوئی حرف

2022-12-01
    المعاني للترجمة
  1. ‎تیرے عشق میں جو بھی ڈوب گیا‎
  2. بوسہ ڈھونڈنے
  3. com
  4. اس لیے سب کو نہیں لگ